ہندوستانی شیروں کے سامنے میمنے بنے کالے چیتے

<h1 style='text-align: right; font-family:Jameel,Tahoma;direction: rtl;font-weight:normal;'>ہندوستانی شیروں کے سامنے میمنے بنے کالے چیتے</h1>

وراٹ کوہلی اور روہت شرما نے کی ریکارڈ کی بارش، بھارت نے ویسٹ انڈیز کو ۱-۳ سے ہرایا
تروننت پورم: بھارت اور ویسٹ انڈیز کے بیچ کھیلے گئے ون ڈے سیریز کا پانچواں اور آخری مقابلہ انڈیا نے نو وکٹ سے جیت لیا۔ یہ میچ تروننت پورم کے گرین فیلڈ انٹرنیشنل اسٹیڈیم میں کھیلا گیا۔ ویسٹ انڈیز ٹیم کو نو وکٹ سے ہرا کر ٹیم انڈیا نے ۱-۳ سے سیریز پر قبضہ کیا ہے۔۱۰۵ رنوں کا پیچھا کرتے ہوئے بھارتیہ ٹیم کی طرف سے روہت شرما نے سب سے زیادہ ۶۳ رن بنائے ۔ روہت شرما کے نام ایک اور ریکارڈ درج ہوگیا ہے۔ وہ سال۲۰۱۸ میں ایک ہزار رن پورا کرنے والے تیسرے کرکٹر بن گئے ہیں۔ ان کے علاوہ انگلینڈ کے کھلاڑی جانی بئیرسٹو اور بھارت کے کپتان وراٹ کوہلی یہ کارنامہ کرچکے ہیں۔اس میچ کے لئے پلیئر آف دا سیریز کپتان وراٹ کوہلی کے نام رہی۔ وراٹ کوہلی نے سیریز کے پانچ میچوں میں ۱۵۱ کے اوسط سے ۴۵۳ رن بنائے۔
اس سے پہلے ویسٹ انڈیز نے ٹاس جیتا اور پہلے بلے بازی کا فیصلہ کیا ۔ وراٹ کوہلی کی ٹیم انڈیا یکم نومبر کو پانچویں ونڈے میں سیریز جیت کے ارادے سے میدان میں اتری۔ پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز ٹیم صرف ۱۰۴ رن پر آل آؤٹ ہو گئی۔ فیرن پاویل، شائی ہاپ اور آشین تھامس بغیر کھاتہ کھولے ہی پویلین لوٹے۔ راؤمین پاویل(۱۶)، مارلن سیسوالس(۲۴) اور کپتان جیسن ہولڈر(۲۵) کے علاوہ کوئی بھی کیروبیائی کھلاڑی دہائی کا آنکڑہ بھی نہیں چھو پایا۔ بتادیں کہ اس سے پہلے ٹیم انڈیا نے پہلا میچ اپنے نام کیا تھا تو وہیں ویسٹ انڈیز نے دوسرا میچ ڈرا کرا دیا اور پھر تیسرے میچ میں جیت حاصل کرتے ہوئے سیریز میں ۱-۱ سے برابری کرلی تھی۔ چوتھے میچ میں بھارت نے ۲۲۴ رن کے بڑے فرق سے جیت حاصل کرتے ہوئے بڑھت لے لی تھی اور پانچویں میچ میں انڈیا نے نو وکٹ سے میچ جیت لیا۔ وراٹ کوہلی اس میچ میں ۳۳ رن بنا کر ناٹ آؤٹ رہے۔ بھارتیہ کپتان وراٹ کوہلی کے بلے سے ریکارڈ نکل نہیں رہے ہیں بلکہ برس رہے ہیں ۔ وہ بھی مانو طوفانی رفتار سے۔ ہر میچ کسی نہ کسی ریکارڈ کے ساتھ ختم ہو رہا ہے اور ویسٹ انڈیز کے خلاف تروننت پورم میں پانچواں ون ڈے بھی کوئی اس سے اچھوتا نہیں رہا۔ کوہلی نے ٹیپ پررہتے ہوئے طوفانی ریکارڈوں کے ساتھ سال کا خاتمہ کیا۔ ان میں سے ریکارڈ تو ایسا ہے کہ جس میں کوہلی نے ایک ساتھ اپنے وقت کے دو دگج کپتان ریکی پونٹنگ اور ہنسی کرونئے کو پیچھےچھوڑدیا۔ پوری سیریز میں وراٹ کے بلے نے ویسٹ انڈیز کے گیندبازوں کو جم کر دھویا۔ ایک کے بعد ایک بہترین اننگ اور کوہلی سیریز میں سب سے زیادہ رن بنانے والے بلے باز رہے۔ کوہلی نے پانچ میچوں میں ۱۵۱ کی اوسط سے ۴۵۳ رن بنائے۔ اس میں انہوں نے تین سیکڑے لگائے کل ملا کر بلے سے ۵۲ چوکے اور سات چھکے مارے۔
کوہلی نے ایک طوفانی ریکارڈ بناتے ہوئے ایک بہت ہی خاص ریکارڈ میں آسٹرلیائی سابق کپتان رنکی پونٹنگ کو پیچھے چھوڑ دیا۔
اب جیت فیصد معاملے میں صرف کلائیو لائیڈ کوہلی سے آگے ہیں۔ دونوں میں تقریباً چار فیصد کا فرق ہے اور امید ہے کہ کوہلی ایک دن لائیڈ کو پیچھے چھوڑتے ہوئے چوٹی پر پہونچ جائیں گے۔ اس کے علاوہ کوہلی نے سال ۲۰۱۸ کا خاتمہ ون ڈے میں دنیا کے بیسٹ بلے باز کے ساتھ کیا۔ کوہلی سال ۲۰۱۸ میں ون ڈے میں سب سے زیادہ رن بنانے والے بلے باز رہے۔ ہزار یا اس سے اوپر رن بنانے والے تین بلے باز صرف وراٹ کوہلی(۱۱۹۷) ، روہت شرما(۱۰۲۸) اور انگلینڈ کے جانی بیورسٹو(۱۰۲۵) رہے۔ اس طرح وراٹ نے ون ڈے میں شاندار انداز میں سال کا خاتمہ کیا۔ بھارت اب اپنا اگلا ون ڈے آسٹریلیا میںجنوری میں کھیلے گا۔
اگر ریکارڈوں کی بارش ٹیم انڈیا کے کپتان وراٹ کوہلی کررہے ہیں تو ون ڈے کے بادشاہ بلے باز روہت شرما بھی اپنے کپتان سے مقابلہ کرنے کی پوری کوشش کررہے ہیں۔ ویسٹ انڈیز  کے  خلاف پانچویں اور آخری ون ڈے میں تروننت پورم میں روہت شرما نے بلے سے دو بڑے دھماکے کئے۔ ایک وقت تھا جب یووراج سنگھ کو بھارت کا سکسر کنگ کہا جاتا تھا، یووراج کو یہ تمغہ ملنے کی وجہ الگ تھی، لیکن اب ٹیم انڈیا کے موجودہ چیمپئن بلے باز روہت شرما دھیرے دھیرے اس ٹائٹل کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ حالانکہ، ان کا مقابلہ مہیندر سنگھ دھونی کے ساتھ ہیں، لیکن دونوں کے بیچ زیادہ فرق نہیںہے۔
روہت نے پانچویں ون ڈے میں وہ کمال کرڈالا، جو سچن تیندولکر جیسا بلے باز بہت ہی معمولی فرق سے کرنے سے چوک گیا۔ بتا دیں کہ اب روہت شرما نے ون ڈے میں چھکوں کی دہری سنچری بنا دی۔ روہت نے ہولڈر کے پھینکے دسویں اوو ر کی دوسری گیند پرمڈ وکٹ کے اوپر سے چھکا جڑ کر ون ڈے میں اپنا دوسوواں چھکا لگایا۔
روہت شرما نے دوسرا کمال وہ کیا، جو صرف وراٹ کوہلی اور انگلینڈ کے جانی بیورسٹو ہی کر سکے ہیں۔ دراصل روہت سال ۲۰۱۸ میں ایک ہزار یا اس سے زیادہ رن بنانے والے دنیا کے صرف تیسرے بلے بن گئے ہیں۔ وراٹ نے چودہ میچوں میں ۱۱۹۷ رن بنائے ہیں تو روہت شرما نے انیس میچ میں۱۰۲۸ رن اور انگلینڈ کے جانی بیورسٹو نے ۲۲ میچ میں ۱۰۲۵ بنائے ہیں۔
کل ملا کر روہت شرما کےلئے ویسٹ انڈیز کے خلاف یہ سیریز بہت ہی یادگار رہی۔